میری تعمیر میں مُضمِر، ہے اِک صورت خرابی کی ہیولیٰ، برق خرمن کا، ہے خونِ گرم دہقاں کا

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી

یہ  غالِبؔ  کی  دسویں  غزل  کا  چھٹا  اور معنی  خیز  شعر  ہے ۔

میری تعمیر  میں مُضمِر، ہے اِک صورت خرابی کی
ہیولیٰ،   برق ِ خرمن   کا، ہے خونِ گرم دہقاں  کا 

 تعمیر  =ساخت،   بناوٹ،construction     مُضمِر =   پوشیدہ،  چھُپا ہوا     ہیولیٰ= مادّہ  دہقاں=  دیہاتی،  کاشت کار   خونِ  گرم = کوشش ،  سر گرمی

 تشریح:   اس شعر  میں  غالِبؔ  نے  مسعلہِ  طبیا  human body anatomy  کو  ہمارےسامنے  رکھا ہے ۔  ہمارے  جسم  کی  رگوں  میں  جو  خون  دوڑتا  ہے  وہ  ہمارے  جسم  کی   نش  و  نُما   کے  لئے  غذا  پہنچاتا  ہے ،  جسم  کو  گرم  رکھتا ہے،  اور  ہمیں  کام  کرنے  کی  قوت  دیتا  ہے۔  یہ  خون ،  ہماری  غذا  کو  تحلیل  کرتا ہے،  پچاتا ہے  اور   اس  دورانِ  عمل  خود  بھی  تحلیل  یا  destroy   ہو  جاتا ہے۔  غالِبؔ  کہتا ہے  کہ  میں  وہ   دیہا تی  ہوں  جو  اپنی  سرگرمی،  محنت،  ا ور  کوششوں  سے ،  فصل  پیدا  کرکے  کھیت  میں  اناج  کا  ڈھیڑ  یا  خرمن  بناتا ہے۔  پھر   اِس  پر  بجلی  گرتی ہے  اور  اسے  تباہ  کر  دیتی  ہے۔  اس  کی  وجہ  یہ  ہے  کہ  برق  کی  رگوں  کے  خون ،  اور  میری   رگوں  کے  خون  کا  اصلی  مادّہ  ایک  ہی  ہے۔  گویا  میری  تعمیر  میں  میری  تباہی  کے  بیج  پہلے  ہی  سے  موجود  ہیں۔  یہ  شعر  قرآن  کی  آیت   کُل  نفسِِِِ   ذ ا ئق  الموت  کو  دوہراتا  نظر  آتا  ہے۔  ہر  چیز  فانی  ہے  کیونکہ  ہر شہ  کی  بناوٹ  میں  اس  کی  فنا  اور  موت  کا فارمولا (formula)  پہلے سے  ہی  پروگرام  (program) کےا  ہوا  ہے۔  یا یہ کہ  بقا  اور  فنا  کا  مادّہ  ایک  ہی  ہے۔ لوگ  کہتے  ہیں  کہ  جان ہے  تو  جہان  ہے۔  غالِب  ؔ کہتا  ہے  کہ  جان  ہے  تو  موت  ہے

7شعر  کی  خوبیاں:   ایک  نظر   آپ،  میں  نے  جو  ہاتھ  کی  رگوں  اور  بجلی  گرنے  کی  تصویریں  بنائی  ہیں،  اس  پر کریں۔  صاف  نظر آئےگا  کہ  دونوں  میں  کافی  مُشاہبت ہے۔  لال  خون  کی  رگوں  والا  ہاتھ  کام  کرتا ہے  چیزیں  بناتا ہے  ا ور  سفید  خون  کی  رگوں  والی  بجلی  اسے  ختم  کر  دیتی  ہے۔  اور  دونوں  کی  رگیں  ایک  جیسی  ہیں۔  غالب ؔ  کی  شاعری  کا  قائل  ہر کوئی  اسی  لئے  ہے  کہ  غالبؔ  اپنی  باتیں  کہنے  کے  لئے  دور  د ور  سے نایاب  مثالیں  پیش  کرتا  ہے۔  کس  میں  دم  ہے  جو  ایسی   تشبیح  او ر  استعارے  پیش  کر  سکے؟

ماہرینِ  غالِبؔ  کی  رائے:

نیاز ؔ  فتح پوری : – میں  اپنی  تباہی  کا  گلہ  کِس  سے  کروں  جبکہ  میری  ساخت  اور  تعمیر  میں  خرابی  کی  صورت  پوشیدہ  ہے۔  یعنی  جس  طرح  دہقان  کا  محنت  کرکے  خرمن  جمع  کرنا  بجلی  گرنے  کا  باعث  ہے  اِسی  طرح   خود  میرا  وجود  میری  تباہی  کا  باعث  ہے۔

 

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી