عشق سے، طبیعت نے، زیست کا مَزا پایا

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી

عشق سے، طبیعت نے،زیست کا  مزا پایا
درد  کی  دوا  پا ئی،  دردِ   بےدوا پا یا
 درد  کی  دوا=  دردِ   زندگی  کی  دوا   درد بے  دوا = عشق

 تشریح:  شاعر  کا  خیال  ہے  کہ  زند گی   بغیر  عشق  کے  بد  مزہ  اور  بیکار  ہے ۔اگر  عشق  نہ  ہو  تو  زندگی  ایک دردِسر ہے۔کہتے  ہیں  جب عشق  کا  مرض  لگا  تو  زندگی  میں  لطف  آیا  کیونکہ غمِ عشق  میں  غمِ  دنیا  کو  بھول  گئے۔گویا  ہمیں  دردِ  زِندگی  کی  دوا  مل  گئی۔  مگر  یہ  دوا  ایسی  کہ  جس  کا  کوئی  اُتار  نہیں  یعنی  عشق  دردِ  بے  دوا  ہے۔ 

شعر  کی  خوبیاں:  شعر  چھوٹی  بحر  (meter)  میں ہےاورالفاظ  آساناور ثلیث  ہیں ۔ شعرکے  دونوں  مصروں  میں  ’پایا‘  لفظ  ہے  اس  لئے  وہ  مصرئہ      ثانی  یا  دوسرا  مصرہ   کہلائے  گا۔  شعرعشق  کی گہرائی  کو  بیان  کر تا  ہے۔ 

جاپان   میں  سوموکُشتی  باز  اپنا  وزن  ازحد  بڑہا  دیتے  ہیں اوراس  وجہ سے  وہ  دِلکی  اور  دوسری  کئیں  بیماریوں  کا  شکار  ہوتے  ہیں  اورکم عمر  میں  مرجاتے  ہیں۔لیکن  وہ اپنی  ایسی  زندگی کوچاہتے  ہیں۔  یہ  ان  کا  کُشتی  کرنے  کا  عشق  ہے۔  اسی طرح  ایک  عاشق  اپنےہر  زخم سےمحبت کرتا  ہے۔  غالِبؔ  کہتا  ہے  اسکی  زندگی  کا  مقصدہی عشق کےزخموں  کی  ایزا  دوستی  ہے۔  یعنی  بغیر عشق کےزندگی بےمعنی  اور   بور  کرنے  والی  ہو جاتی  ہے۔عشق  زندگی  دوسرےغموں کو بھلا  دیتا  ہےاور  زندگی کوجینے  ایک مقصد  عطا  کرتا  ہے۔

اگرعشقِ  حقیقی  کےنظریہِ سےشعرکو  دیکھیں تو ایک   الگ مطلب  پیدا  کرتا  ہے۔منصورؔ  اورمیراؔ     اور  گردھرؔ  کےعشق  میں گرفتارتھے ۔منصورہنستےہنستےپھانسی چڑھ گئے  اور  میرؔا  زہر  پی گئی۔

 

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી