عشرتِ قتل گہِ اہلِ تمنّا ، مت پوچھ عیدِ نظّارہ ہے، شمشیر کا عُریاں ہونا

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી

   شعر  نمبر  ۵

عشرتِ قتل گہِ اہلِ تمنّا ،مت  پوچھ
عیدِ نظّارہ ہے ،شمشیر کاعُریاں ہونا

 عشرت=  خوشی  اہلِ  تمنّا=  عُشّاق ،  چاہت  کی  تمنّا  کرنے  والے        عیدِ نظّارہ= نظّارہِ  کی  عید            عُریاں  ہونا =نیام  سے  نِکلنا،  کھُلا  ہونا

 تشریح :غالِب ؔ نے  اس شعرمیں ایک منظرپیش کیاہے۔عاشقوں کاایک ہجوم معشوق کےہاتھوں قتل  ہونےکوبیتاب قتل گا ہ میں کھڑاہے۔   جب معشوق نےشمشیرcurved sword looking like crescent, کونیام سےکھینچا  توعاشق  خوشی  سے  جھوم  اُٹھے ۔   یہ  ہجوم  قتل  ہونے  کو  اِس  لئے  بیتاب  ہے  کہ  وقتِ قتل  وہ  معشوق  کے  بہت  قریب  ہونگے  اور  وہ معشوق  کو  د یکھتے  دیکھتے   فنا   ہو  جائیں گے۔    غالِب ؔ   کہتا  ہے کہ  اے  میرے  دوست  قتل گاہ  میں  عاشقوں  کی  خوشیوں  کا  حال  مجھے  مت  پوچھ۔  یہ   بیان  مَیں  الفاظ  میں  کر  نہیں  سکتا ۔  قتل گاہ  میں  یار  کی  تلوار  کو  عُریاں  دیکھ  کر  قتل  ہونے  کی  خوشی  میں  عاشق  ایسے  جھوم  اُٹھے  جیسے  انہوں  نے  تلوار  نہیں بلکہ  عید  کا  چاند  دیکھ  لیا  ہو۔   غالِبؔ  نے  شمشیر  کو  ہلالِ  عید  سے  تشبیہ  دی  ہے۔  

شعر کی خوبیاں:اس شعر  میں  غالِب ؔ  نے  عاشقوں  کو  اہل  تمنّا  کہا  ہے  او ر  ان   کی  خوشی  کے  منظر  کو  نظّارے  کی  عید  یعنیکہ mother of all beautiful scenesکہا  ہے۔  مذہب  یا  ملّت  پر  مرنے  والے  بھی  اسی  جوش  و  خروش  سے  میدان ِ  جنگ  میں  جاتے  ہیں۔  میدانِ  جنگ  میں  جب  تلوار  چمکتی  ہیں  تو  وہ  اُسے  عید  کا  چاندسمجھتے  ہیں  کہ  شہادت  کی  تاج داریعنقریبہے۔ میدانِ  کربلا  میں  یہی  حال  تھا

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી