شوق، ہر رنگ، رقیبِ سر و ساماں نکلا قیس، تصویر کے پردے میں بھی عریاں نکلا

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી

شوق،ہر  رنگ،رقیبِ سر و  ساماں   نکلا
قیس،  تصویرکےپردےمیں بھی عریاں نکلا
  شوق = عشق    ہر  رنگ =ہر  طرح  in every aspect    رقیب = دشمن   قیس مجنوں  کا  اصلی  نام       سروساماں =تکلّفات ،  آرائش  decoration

تشریح :  عشق  صرف  عشق  کے  لئے ہے  اُسے   روٹی   کپڑ ا  مکان   یا   کو  ئی   اور  دنیوی   آرائش   درکار  نہیں۔  مجنوں  نے  دنیا  کے  ہر  عیش  و  آرائش  کو  چھوڑ  دیا  تھا ۔  عشق  جِس   رنگ   میں  بھی  ہو،    وہ  آرائش   اور    ساز   و   ساماں   کا   دشمن ہے۔   مجنوں  کی  تصویر  دیکھئے۔    اس  کو  عشق  تھا   اِس  لئے   اِس   کی   تصویر   ہمیشہ  بغیر  کپڑوں  میں  (ننگی)  ہی  کھینچی  جاتی  ہے۔  غالِبؔ  کہتا  ہے  کہ پینٹر  نے   اپنے   رنگ  اور کینواس   کے   ذریع    مجنوں  کے  ننگے پن  کو   ڈھاکنا   چاہا   لیکن یہ  ممکِن   نہ   ہو  سکا،   تصویر   میں  بھی     وہ   ننگا   کا  ننگا    رہا۔

ماہرینِ  غالِبؔ    کی  رائے:

بیخوؔدکی  رائے:  عشق   کا   رنگ   ایسا   ثابت   ہوا   ہے  کہ  قیس  کو  تصویر  کے  لباس  میں  بھی  عریاں   رکھا۔   رنگِ  تصویر  بھی   قیس  کی  عریانی(ننگے پن)  کا  پردہ   نہ   بن  سکا۔    ہر  رنگ  کے  معنی ہے  عشق  میں،   دیوانگ ی  میں،  عریانی  (ننگے پن)  میں،  تصویر  کے   رنگ  میں،  یعنی  کہ  ہر  رنگ  میں  عشق   نیک نامی   اور  عزّت   کا   دشمن   ہی   رہا   ہے۔   اور  غالِبؔ  نے  بھی  اُسے  عریاں  ہی   دکھایا   ہے۔ 

طباؔ  طبائی کی  رائے:   ہر  رنگ  محاورہ  نہیں  ہے۔   ہر  طرح   ہونا   چاہیئے تھا۔   تناسب  لفظی(الفاظ کی سجاوٹ) کے  لئے   محاورہ   چھوڑ   دینا  مناسب  نہیں۔ 

شعر  کی  خوبیاں:  اُردو   شاعری   میں  مجنوں  عاشقوں   میں  اوّل  ہے۔  وہ  عشق   کا   خُدا   ہے۔  اُردو   شاعر  مجنوں  کے  ہر  کام  کو  اور   ہر  حرکت  کو  سرہاتے   ہیں  جس طرح   شاگرد   اور   چیلے   اپنے   پیر   یا   گورو   کو   سرہاتے   ہیں۔ 

عشق  صرف  عشق  کے  لئے ہے  اُسے   روٹی  ،کپڑا،   مکان،   یا   کو  ئی   اور   دنیوی   آرائش   درکار  نہیں۔   مجنوں  نے  دنیا  کے  ہر  عیش   و   آرائش  کو  چھوڑ  دیا  تھا۔   جب   ایک   پینٹر  مجنوں  کی  تصویر   بناتا  ہے تو   اسے  ننگی  ہی   بنانا   پڑتا   ہے  کیونکہ  مجنوں  کپڑوں  کو  پھاڑ کر  ننگا   ہو  جاتا  تھا۔   غالِب ؔ    کہتا  ہے  کہ  پینٹر  یا  مصوّر  کا  paint  اور   کینواس   بھی   مجنوں  کو  cover  نہیں  کر  سکتے۔   حالانکہ   رنگ   اور   کینواس   دونوں   خراب   چیزوں  کو   ڈھانک   سکتے  ہیں   ۔  ایک   پینٹر ،   ایک  جوگی   کی  تصویر   کپڑے   پہنے  نہیں   بنا   سکتا  اُسے  ننگا   اور  بھبھوت  رمائے  ہوئے   ہی   بتانا   پڑتا   ہے۔  شعر  کے  الفاظ  کی  سجاوٹ  بہت  خوب  ہے

https://www.youtube.com/watch?v=4ZXp968YB5A Film: Mirza Ghalib. Music: Jaidev. Singer: Asha Bhosle

https://www.youtube.com/watch?v=4Tqt8p_BtUM Singer: Ghulam Ali

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી