آشفتگی نے نقشِ سویدا کیا دُرست

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી

آشفتگی نے نقشِ  سویدا  کیا   دُرست
ظاہر ہوا  کہ داغ  کا سرمایہ   دود تھا
آشفتگی =  پریشانی  نقش=  print, carving    سویدا=  کالا   نقشِ  سویدا=  دِل  پر ایک  کالا  تِل  رہتا  ہے  سویدا  کیا  درست =  کالےپن  کو  مٹا  دیا   دود = دھواں   

تشریح:   یہ  شعر  سمجھنےکے لئے  ایک  روایت   کا جاننا ضروری  ہے ۔   رسول مُحمّد ﷺ جب تین   یا    چارسالکے  تھے،  انکی  دایہ  حلیمہ  جو مُحمّد کے کو دودھ پلاتی تھی  اور   پروَرِش کرتی تھی،اسکا   بیٹا حضرت  مُحمّد   سے  باہر   کھیل رہا  تھا۔  اُس  وقت  دو  فرشتےآئے  اور  دھیرے  سے  رسول ﷺ  کو  اُتھایا   اورانکا  سینہ مبارک  کھولا،   دِل  نکالا،  ایک  پلیٹ  میں  رکھا،  اور اُس  کو   دھو  کر  اس   پر  موجود    کالا    داغ    مِٹا  دیا ۔ حلیمہ  کا    بیٹا  گبھرا کر  بھاگا  اور جاکر  اپنی  ماں  کو  واقعہ    بیان  کیا۔ حلیمہ  نے  سوچا  کے  کوئی  خبيث روح  ہوگی  اور  وہ حضرتمُحمّد   کو  ان  کی  ماں حضرت  آمنہ  کے  پاس  لے  گئی  اور   ماجرا   بتایا۔ حضرت  آمنہ  نے  کہا  فکر  کی  کوئی  بات  نہیں۔  میرا  بیٹا  ایک  اعلیٰ  مقام  حاصل  کرنے  والا  ہے۔  علما  کہتے  ہیں  کے  قراؔن کی آیت  اَلَمْ  نَشْرِحْ  لَکَ صَدْرَکْ (Have We not expanded thee thy breast?) اس   واقعہ  کی  طرف  اشارہ  کرتی  ہے۔

دوسرا  یہ  کہ  جب  کوئلہ جلتا  ہے  تو  اس  میں سے کالا  دھواں  نکلنے  کے  بعد  سفید  راکھ  رہ  جاتی  ہے ۔  مطلب  یہ  ہوا  کے  کوئلہ در  اصل  سفید  تھا  لیکن  جو  دھواں  اس  میں  بھرا  تھا    اِس  نے  کوئلے  کو  کالا  بنا  دیا  تھا۔ 

 اس  شعر  میں غالِبؔ  کہنا  چاہتا ہے   انسان  اپنے دل  پر  کالا  داغ  لے  کر  پیدا  ہوتا  ہے  اور یہ انسان  کو  غلط  راستہ  پر  لے  جاتا  ہے

میرے  دل  پر  جو  کالا  داغ  تھا  وہ بُبرے خیالات اور  چیزوں  سے بھرا   تھا۔ لیکن  جیسے  جیسے  مُجھ  پر  مصیبتیں  آتی  گئیں  میرے  دِل  کا   کالا  داغ  یا  نقشِ  سویدا   مٹتا  گیا۔ ۔  آشفتگی  کی تپش  نے اسے  جلا   ڈالا  اور درست  کر  دیا  اور مَیں  پاک  ہو  گیا۔

۔  یعنی  انسان  کو  غم  اورمُصیبتوں  سے  بھاگنا  نہیں  چاہیے  بلکہ  اس  کا استقبال  کرنا  چھاہیے تاکہ کالا تل  یا نقشِ  سویدا  مٹ  جائے۔   شاید غالِبؔ یہ لکہنا  چاہتا  ہو رسول مُحمّد کا  کالا  تِل  دور  کرنے  میں  فرشتوں  کی  مدد  ملی  لیکن اپنی  کوششوں  کے  ذریع  ہم  بھی  اس  سے  نجات  پا  سکتے  ہیں۔ زندگی  کی  مصیبتوں  اور  غموں  کو  دیکھنے  کا  یہ ایک  خوبصورت  طریقہ  ہے

Please click for video: Naqsh fariyaadi hai kis ki; Voice: Talat Mahmood   music: Khaiyyam

http://www.youtube.com/watch?v=sNqiSkcbCAQ

This post is also available in: English Hindi ગુજરાતી